فوج اور سیاستدانوں میں جاری خوفناک جنگ میں عمران خان سرگرم ہو گئے

پاکستان میں فوج اور سیاستدانوں میں جاری طاقت اور اقتدار کی خوفناک جنگ میں وزیر اعظم عمران خان بھی سرگرم ہو گئے ہیں.

وزیراعظم عمران خان نے سندھ میں قائم پیپلز پارٹی کی حکومت گرانے کے لیے جاری جوڑ توڑ کے سلسلے میں گرینڈ ڈیمو کریٹک الائنس کے رکن سندھ اسمبلی علی گوہر مہر سے ٹیلی فون پر بات چیت کی

پی ٹی آئی سندھ کے ترجمان نے ٹیلی فونک رابطے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا وزیراعظم عمران خان نے علی گوہر مہر کی جانب سے صوبے کے دورے کی دعوت بھی قبول کرلی اور وہ جلد سندھ پہنچیں گے

عمران خان پیپلز پارٹی کی صوبائی حکومت گرانے کے لیے سندھ کی اہم سیاسی شخصیات سے ملاقاتیں بھی کریں گے۔

دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے گورنر سندھ عمران اسماعیل سے رابطہ کر کے جے آئی ٹی رپورٹ کی روشنی میں ممکنہ کارروائیوں اور سندھ کی سیاسی صورتِ حال پر بات چیت کی۔

راولپنڈی اور کراچی میں جاری اس جنگ کے دوران سندھ میں گورنر راج نافظ کیے جانے کی افواہیں گرم میں. ماہرین کے مطابق اٹھارویں ترمیم کے بعد قانونی طور پر ایسا ممکن نہیں

فوج کی شراکت میں بننے والی جی آئی ٹی رپورٹ کے بعد زرداری، بلاول، فریال تالپور، مراد علی شاہ سمیت پیپلز پارٹی کی اہم قیادت پر بیرون ملک جانے کی پابندی عائد کی جا چکی ہے

فواد چوہدری کل سندھ کا دورہ کریں گے جس میں ان کی تحریک انصاف اور جی ڈی اے رہنماؤں سے جوڑ توڑ کے سلسلے میں اہم ملاقاتیں متوقع ہیں۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی افتخار درانی نے اندر کی بے چینی ظاہر کرتے ہوے کہا کہ سندھ میں قیادت کی تبدیلی ناگزیر ہو چکی ہے۔

سندھ میں گورنر راج سے متعلق سوال پر افتخار درانی کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کو خود سوچنا چاہیے کہ حکومت کیسے چلانی ہے۔