نواز شریف کیس: عدالت میں سخت مکالمے بازی

نیب پراسیکیوٹر اکرم قریشی نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں ایک دفعہ پھر نواز شریف کی سزا معطلی درخواست کی مخالفت کردی۔ جب اپیل کا قانونی رستہ موجود ہے تو سزا معطلی درخواست کو نہ سنا جائے: نیب
آپ کا اعتراض نوٹ کرلیا ہے آگے چلیں سزا معطلی درخواست پر دلائل دیں: اسلام آباد ہائی کورٹ

نواز شریف کا ریفرنس ٹرائل کورٹ میں روزانہ کی بنیاد پر چلا۔ کیا کوئی اور ایسا کیس ہے جس کی سماعت اس طرح روزانہ کی بنیاد پر ہوئی ہو؟ اس کیس میں مخصوص حالات (Peculiar circumstances) ہیں جن سے ہم واقف ہیں: جسٹس اطہر من اللہ کا نیب پراسیکیوٹر اکرم قریشی سے مکالمہ

گمراہ کن بیان دینے والے کا کل تک نام بتائیں، جسٹس اطہر من اللہ

جب عدالت نے واضح کردیا کہ نواز شریف کی سزا معطلی پر پہلے فیصلہ سنایا جائے گا تو نیب پراسیکیوٹر الرم قریشی نے خوب الجھاؤ کے بعد کہا کل میری ماں کو لاہور میں دل کا دورہ پڑا وہ بیمار ہیں، آپ اجازت دیں گے تو میں روسٹرم چھوڑ دوں۔ عدالت نے پراسیکیوٹر کو دلائل جاری رکھنے کا کہہ دیا۔

نواز شریف سزا معطلی سماعت ملتوی
نیب پراسیکیوٹر اکرم قریشی کی نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث کی تعریفوں کے پل باندھ دیے۔
آپ personal ہوگئے ہیں: خواجہ حارث کا جواب
آپ میرے قابل چھوٹے بھائی ہیں، نیب پراسیکیوٹر
باقی دلائل اب میں سوموار کو صرف ایک گھنٹہ میں دونگا، نیب پراسیکیوٹر

سپریم کورٹ کے ججوں میں ڈیم فنڈ پر اختلافات

کلثوم نواز کی بیماری کا نیب نے کبھی یقین نہیں کیا اور اس کی ہر میڈیکل رپورٹ کی مخالفت کی۔
آج جب نیب کے اسپیشل پراسیکیوٹر اکرم قریشی نے اپنی ماں کی بیماری کا عدالت کو بتایا تو نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث نے بیماری کا مذاق نہیں اڑایا۔ نیب کی التواء کی درخواست کی مخالفت بھی نہیں کی۔