وانا میں سرکاری طالبان کی عوام پر کھلی فائرنگ، ہلاکتیں

وانا! سرکاری طالبان کی فائرنگ اور ھینڈ گرنیٹ حملے میں زخمی ھونے والے پشتون تحفظ مومنٹ کے کارکنان کو ابتدائی طبی امداد فراہم کی جارہی ھے ھسپتال میں ایمرجنسی نافذ

منظور پشین نے خبر دی کہ جنوبی وزیرستان وانہ میں علی وزیر کے آس پاس ہزاروں کی تعداد میں عام عوام موجود ہیں. کیمپ سے آئے ہوے سرکاری طالبانوں نے لوگوں پر فائرنگ کھول دی ہے جس سے ابتک تین شہری زخمی ہوگیے ہیں طالبانوں کے ساتھ ارمی اور ایف سی بھی ہے ۔ عوام گولیوں کی جواب پھتراو سے دے رہے ہیں۔

وانا سے حمید مندوخیل کے مطابق وانا ہوائی فائرنگ کے ساتھ ساتھ پی ٹی ایم کی ٹوہیاں دکانوں اور لوگوں کے سروں سے اتار کر جلائی جا رہی ہیں

تاج مسعود نے لکھا کہ اج کا واقعہ وزیرستان کے بجائے کشمیر میں ہوتا یا فلسطین میں تو میڈیا سے لیکر ٹیوٹر دانشوروں تک سب نے اسمان سر پہ اٹھانا تھا مگر وزیرستان کے واقعے کسی کی مذمت نہیں آئی

طارق افغان نے سوشل میڈیا پر لکھا کہ وزیرستان میں طالبان وانا بازار پر قبضہ کی کوشش نے ضرب عضب کی کامیابی کے دعووں کو ننگا کردیا۔ ریاست نہ پہلے طالبان کو ختم کرنے کے حق میں تھی نہ مستقبل میں ہوگی

انور زیب کے تبصرہ کرتے ہوے کہا کہ پس ثابت ہوا کہ جنوبی اور شمالی وزیرستان میں طالبان کے خلاف آپریشن صرف ایک ڈرامہ تھا

منظور پشین رات 09:00 بجے فیس بک پر براہراست خطاب کریں گے