کوئی سسٹم ہے، جو انتخابات کو التویٰ میں ڈالنا چاہتا ہے

پاکستان پیپلز پارٹی نے آئندہ عام انتخابات ہر صورت مقررہ تاریخ 25 جولائی کو کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ اگر انتخابات موخر ہوئے تو ملک بے چینی اور ہیجان کا شکار ہوجائیگا۔

پیپلز پارٹی کے رہنما اعتزاز احسن، نیئر بخاری، فرحت اللہ بابر، شیری رحمان، خورشید احمد شاہ، مراد علی شاہ اور سعید غنی نے میڈیا سیل بلاول ہائوس میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نامزدگی فارم پر قانون سازی پارلیمینٹ کا حق ہے، جسے عدالتی حکم کے ذریعے تبدیل نہیں کیا جاسکتا۔

اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ گزشتہ ایک دو روز کے دوران ہونے والی سیاسی پیش رفت سے لگتا ہے کہ جیسے کوئی سسٹم ہے، جو انتخابات کو التویٰ میں ڈالنا چاہتا ہے، اسلام آباد ہائی کورٹ الیکشن کمیشن کی جانب سے کی گئی متعدد حلقہ بندیوں کو کالعدم قرار دے چکی ہے اور بلوچستان ہائی کورٹ سے بھی اسی طرح کے فیصلے متوقع ہیں، عدالتی فیصلوں کی روشنی میں ازسر نو حلقہ بندیاں کی گئیں، تو ازسر نو اعتراضات بھی سامنے آئیں گے جس کیلئے مزید وقت درکار ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر کل سے نامزدگی فارم کا اجراء نہ ہوا اور عدالتی حکم کے تحت فارمز کی چھپائی کا کام بھی ازسر نو شروع کیا گیا تو اس عمل کو مکمل ہونے میں بھی وقت درکار ہوگا، جس کے باعث انتخابات میں تاخیر ہوسکتی ہے، پی پی پی اس طرح کی تاخیر کے حق میں نہیں ہے، پیپلز پارٹی کا موقف غیرمبہم ہے کہ انتخابات ہر صورت مقررہ تاریخ 25 جولائی کو ہونے چاہئیں