پاک فوج کے جنرل کی غداری پر فوج کا جھوٹا سچا بیان

سابق آئی ایس آئی سربراہ کی کتاب پر پاکستان میں چاروں طرف سے شور مچنے پر اتنے دنوں کے بعد پاک فوج کی آنکھ بھی کھل گئی

عوام کا غصہ ٹھنڈا کرنے کے لیے پاک فوج کی طرف سے جھوٹا سچا بیان داغ دیا گیا

یاد رہے کہ سیاستداں کے چھوٹے سے بیان پر قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس بلا کر خوب واویلا کیا گیا مگر فوجی جنرل کی طرف سے قومی راز افشا کیے جانے پر ایک جھوٹا سچا بیان آ گیا ہے

اسددرانی کی کتاب پر قومی سلامتی کمیٹی کا ہنگامی اجلاس بلایا جائے:نواز شریف

پاکستان کی خفیہ ایجنسی انٹرسروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے سابق ڈائریکٹر جنرل اسد درانی کی کتاب پر فوج کے تحفظات سامنے آ گئے ہیں۔

سیکیورٹی ذرائع نے کہا ہے کہ اس کتاب میں بہت سے موضوعات حقائق کے برعکس بیان کی گئے ہیں۔

سیکیورٹی ذرائع کے مطابق اسد درانی کو ان بیانات پر پوزیشن واضح کرنے کے لیے (جنرل ہیڈکوارٹرز) جی ایچ کیو طلب کیا جا رہا ہے۔

ذرائع کے مطابق ملٹری ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر اسد درانی کو اپنی پوزیشن واضح کرنی ہوگی اور یوں عسکری قیادت نے یہ واضح پیغام دیا ہے کہ اگر پاک فوج کا کوئی سابق افسر بھی ملکی مفاد کے خلاف کوئی بات کرے گا تو اس کے خلاف بھی ایکشن لیا جائے گا۔

واضح رہے کہ آئی ایس آئی کے سابق سربراہ لیفٹیننٹ جنرل (ر) اسد درانی نے سابق ‘را’ چیف اے ایس دلت کے ساتھ مل کر لکھی گئی کتاب ‘دی سپائے کرونیکلز: را، آئی ایس آئی اینڈ دی الوژن آف پیس’ میں پاکستان اور بھارت کے درمیان اہم معاملات پر بات کی ہے۔

کتاب میں جن معاملات پر روشنی ڈالی گئی، اُن میں کارگل آپریشن، ایبٹ آباد میں امریکی نیوی سیلز کا اسامہ بن لادن کو ہلاک کرنے کا آپریشن، کلبھوشن یادیو کی گرفتاری، حافظ سعید، کشمیر، برہان وانی اور دیگر معاملات شامل ہیں۔

اس کتاب پر پاکستان کی سیاسی قیادت نے سنگین خدشات ظاہر کیے ہیں۔ پاکستان کے سابق وزیراعظم نواز شریف نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اسددرانی کی کتاب پرقومی سلامتی کمیٹی کا ہنگامی اجلاس بلایا جائے ۔

انہوں نے کہا کہ قومی سانحات اور سلامتی سے متعلق معاملات پر انکوائری کے لیے قابل اعتبار قومی کمیشن بنایا جائے ، ملک میں ایک وقت میں دو تین حکومتیں نہیں چل سکتیں۔

سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے پاکستان اور بھارت کی خفیہ ایجنسیوں کے دو سابق سربراہوں کی کتاب ‘دی سپائے کرونیکلز: را، آئی ایس آئی اینڈ دی الوژن آف پیس’ کی اشاعت پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر یہ کتاب کسی سویلین یا سیاستدان نے بھارتی ہم منصب کے ساتھ مل کر لکھی ہوتی تو اس پر ‘غدار’ کا فتویٰ لگا دیا جاتا۔